ایسی جگہ جہاں نوٹ کلو کے حصاب سے بکتے ہیں

0
162

ہارجیسا (ویب ڈیسک) حیران کن طور پر دنیا میں ایک جگہ ایسی بھی ہے جہاں پر کرنسی نوٹ کلو کے حصاب سے بکتے ہیں۔ اس بات میں کوئی شک نہیں ہے کہ ہم سبھی کی جیب میں جب کرنسی نوٹ ہوتے ہیں تو ایک غضب کا اعتماد بھی ہمارے ساتھ ہوتا ہے اور جب یہ نہیں ہوتے تو انسان کا اعتماد ہی ختم ہو جاتا ہے۔دنیا بھر میں مختلف ممالک میں نوٹوں کے بھی الگ الگ قصے ہیں۔ کیا آپ کو معلوم ہے کہ ایک ملک ایسا بھی ہے ، جہاں نوٹوں کے بنڈل کلو کے بھاو بکتے ہیں۔ جی ہاں، افریقی

ملک سومالیلنڈ میں سڑکوں اور گلیوں میں نوٹوں کے بنڈل بکتے ہیں۔ تاہم کلو کے بھاو بکتے ان نوٹوں کے بنڈلز کی فروخت کی وجہ حیران کر دینے والی ہے، کہ مقامی لوگ بتاتے ہیں کہ سال 1991 میں خانہ جنگی کے بعد سومالیہ سے الگ ہو کر سومالیلینڈ بن گیاتھا۔ سومالیلنڈ کو اب تک کسی بھی ملک نے بین الاقوامی طور پرمنظوری نہیں دی۔ ظاہر ہے کہ یہ ملک بےحد غریبی اور لاچاری سے دو چار ہے۔ یہاں نہ کوئی سرکاری نظام نافذ ہو پایا اورنہ ہی کوئی روزگار ہے۔ سومالیلنڈ کی کرنسی شیلنگ ہے جس کا کسی بھی ملک میں کوئی وجود نہیں ہے۔ علاوہ ازیں یہاں کرنسی کی قیمت اتنی بڑھ گئی ہے کہ اگر بریڈ بھی خریدنی ہو تو بوری میں بھر کر نوٹ لینے اور دینے پڑتے ہیں۔ یہی وجہ ہےکہ یہاں صرف 500 اور 1000روپیہ کے بڑے نوٹ ہی چلن میں ہیں۔ سومالیلنڈ کے بازار میں فقط 1 امریکی ڈالر کے بدلے 9000 شیلنگ نوٹ ملتے ہیں۔ رپورٹ کے مطابق قریب 650 روپے میں 50 کلو سے ذیادہ شیلنگ نوٹ خریدے جا سکتے ہیں۔ ظاہر ہے اس سے کوئی فائدہ نہیں ہے ایک جانب اس کو لانا لے جانا مشکل ہے اور دوسری جانب اتنی رقم دینے کے بعد بھی آپ کو سامان بہت کم ہی ملیگا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here